ماں

خدا کہوں یا کہ خدا نما کہ دوں
ماں بتا کہ تجھ کو کیا کہ دوں
شرک کی حد اگر ہٹا دے خدا
خداکے بعد ماں کو ہی خدا کہ دوں
مسیح مریم کو بھول کر تجھ کو
ہر دکھ درد کی دوا کہ دوں
تجھ پی لکھتے قلم نہیں تھکتا
تیری ہستی کو میں وفا کہ دوں
میری خوشی میں قضا نہ حائل ہو
ماں کو بھولے سے جو دعا کہ دوں
ماں کے قصے کہانیاں نقوی
کہنا چاہوں تو بے پناہ کہ دوں
نقوی

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s